اہم خبریں پاکستان صحت

سکول اور دفاتر کی بندش کے باوجود لاہور میں ہوا کا معیار بد ترین

سکول اور دفاتر کی بندش کے باوجود لاہور میں ہوا کا معیار بد ترین
Written by admin

(ایشیا نیوز پوائنٹ) لاہور میں سموگ پر قابو پانے کیلئے پنجاب حکومت کی تمام کوششیں بے سود لاہور ایک بار پھر پھر دنیا کے کے آلودہ ترین شہروں کی فہرست میں شامل کر لیا گیا۔ 

صوبائی حکومت سموگ کے خاتمے کے لیے بے بس نظر آتی ہے کیونکہ ہفتے میں تین دن اسکول اور دفاتر بند رکھنے کے باوجود لاہور کی ہوا میں آلودگی کم نہ ہو سکی۔ 

فیصل آباد، گوجرانوالہ، راولپنڈی، ملتان، بہاولپور اور رائے ونڈ سمیت پنجاب کے دیگر شہروں میں بھی فضائی آلودگی بڑھ رہی ہے۔فضائی آلودگی کے اسباب شہریوں کو سانپ کے انفیکشن پیپروں کے کینسر اور دیگر مہلک بیماریوں کا سامنا ہے ۔

ایئر کوالٹی انڈیکس کے مطابق لاہور میں ذرات کی سطح آج 349 تک پہنچ گئی ہے، اور یوں لاہور دنیا کا آلودہ ترین شہر بن گیا۔ اس کے بعد ویتنام کے دارالحکومت ہنوئی میں ذرات کی سطح 234 ہے۔

بھارتی شہر کولکتہ میں تیسرے نمبر پر ہے جس کی ہوا میں زراعت کی تعداد 195 کے قریب پہنچ چکی ہے۔ جبکہ کراچی کی انڈیکس میں 12 سے 19 ویں نمبر پر آگئی۔ تازہ ترین رپورٹ کے مطابق، کراچی نے 126 کے ذرات کی درجہ بندی کی اطلاع دی۔

لاہور کے اسکول اور دفاتر میں ہفتے کے تین روز بندش کا فیصلہ 

صوبائی حکومت پنجاب نے صوبے میں بگڑتی سموں کی صورتحال کے باعث 22 نومبر کو لاہور کے تمام سرکاری اور نجی سکولوں اور دفتروں کو کو ہفتے میں تین روز بند رکھنے کا فیصلہ کیا تھا۔ 

ایک نوٹیفکیشن میں، پنجاب ریلیف کمشنر بابر حیات تارڑ نے کہا ہے کہ یہ پابندی 27 نومبر سے 15 جنوری تک رہے گی۔ کمشنر نےمزید کہا کہ صوبائی دارالحکومت میں تمام پرائیویٹ دفاتر بھی ہفتے میں تین دن بند رہیں گے۔

اس نوٹیفیکیشن کے مطابق صوبائی دارالحکومت میں ہفتہ اتوار اور سوموار کو تمام سرکاری اور نجی اسکول اور دفاتر بند رہیں گے۔ 

About the author

admin

Leave a Comment